معارف کی ڈاک

Maarif - - ء٢٠١٦ ستمبر معارف -

منجھول پوسٹ سیوری، موضع ٨ ١١٢٧ بہار بیگوسرائے

ء٢٠١۶ ٨ ٢١ ہوگا۔ بخیر گرامی مزا کہ امید مسنون سلام مکرمی! بھیدومحصہکاشمارےخصوصیکےمعارفبعدکےانتظارمختصر

اور جسامت ضخامت، یہ کی اس ہے۔ مشتمل پر صفحات ٧١ جو ہوا دست ہم کی روز و شب میں اس کیونکہ بھی۔ ت قرا قابل اور ہے بھی التفات لائق تمکنت نہ ہے بنادیا مقدر ہمارا کو مسائل جن نے کروٹوں کی نہار و لیل اور گردشوں

ہے۔ گیا کیا پیش بھی حل موثر کا ان بلکہ ہے گیا کیا احاطہ کا ان صرف کبھی جب سبب کے ہونے متعلق سے علاقے والے آبادی ہندو الب محرکات و عوامل اور علل و اسباب سے متعلقین و احباب اساتذه، مسلم یر اپنے ظالم، کے زیب اورن سبب کے حقائق تاریخی شده مسخ اور بغیر کیے تجزیہ کا اور بادشاه والے بنانے مسجد کر تو مندر اور شکن بت کش، ہندو گر، ستم دوچار سے کرب نفسیاتی کے طرح عجیب ایک تو سنتا گفتگو کی ہونے حکمراں شعور جیسے جیسے لیکن ہوتا، سے تعلق کے مسجد بابری حال یہی اور ہوتا اس ویسے ویسے تو لگی چاٹ کی مطالعے اور بنی عادت کی نے پ ا، ب پٹنہ تاریخ، شعبہ صدر پرکاش، اوم ڈاکٹر جب گئی۔ چلی ہوتی کمی میں کیفیت سے’’ درشٹی نئی ایک زیب! اورن‘‘ کتاب لکھی میں ہندی کی پٹنہ یونیورسٹی، سے یہاں کے آپ حال یہی اور ہوئے وا اور دریچے کے نظر و فکر تو ی پ لیے میرے لیے اس ہوا۔ بعد کے مطالعے کے منگانے کتاب نامی مسجد’’ بابری‘‘ کردهپیشسےتعلقکےمسجدبابریاورزیب اورنمیںاشاعتخصوصیاس سے ان ازیں علاوه ہیں۔ کرتے فراہم بھی خطوط رہنما نیز ہیں مفید بہت شذرات واقف سے حقائق تاریخی کو طبقے یافتہ تعلیم مسلم یر کے علاقے اپنے اب اور مباحثے صحی کرنے، باتیں کر ڈال آنکھیں میں آنکھوں لیے کے کرانے

ہیں ہوتی وار ہم بھی راہیں کی مجادلے احسن کو رہنے برقرار کو رہنے وقار با

ہے مناسب بھی صل ہے،ضروری بھی جن

دلی پر واقعات ت گھ من کے مورخین متعصب تک کب جانے خدا بہتان تراشی، الزام کی ان نیز گی، ہیں ہوتی دوچند واردات قلبی اور کیفیات سنائی گشت باز صدائے کی شعر اس تک کب سے پردازی افتراء اور طرازی

گی رہے دیتی

اتنا ہے یاد بس میں داستاں ساری کے دے لے تمہیں

تھا گر ستم تھا، ظالم تھا، کش ہندو زیب اورن کہ

حقائق کے جس ہے موضوع سلگتا ایک کردار اقلیتی کا یو ایم۔ اے۔

تو ہو گنجائش اگر ہیں۔ کرتے ادا رول اہم شذرات متعلقہ میں تفہیم و افہام کے شائع میں شکل کتابی کرکے یکجا کو نگارشات متفر تمام میں سلسلے اس جائے۔ کردیا دوچند کو افادیت و اہمیت کی اس کراکر ناشرین کے پاک و ہند میں سلسلے کے مطبوعات کی دارالمصنّفین کی دارالمصنّفین وابستگان یہ رلائے۔ آنسو کے خون نے حرکات ناشائستہ کی کہ تھی اندیشی دور نیتی، نیک اولوالعزمی، ہمتی، علوے حوصلگی، عالی مشکل کر مو منہ سے آسائش ی دنیاو ہوئے کہتے خیرباد کو منفعت مادی طے کو مدار آزما شکیب اور شکن حوصلہ ہوئے کرتے سامنا کا حالات یہ کر بن درماں کا درد اور مسیحا کا م کے اسلام اہل ہندو اہل ہوئے کرتے رہے گنگناتے نہیں الم کا زندگی مجھے مسکرا نہ پہ زندگی مری

نہیں کم سے بہار خزاں وه واسطہ ہو سے م تیرے جسے جس شمارے اس نے آپ کہ ہیں مستحق کے شکریے آپ بہرکیف

کی ہوا بھی بدحظ سبب کے آنے در کے لطیوں کتابتی فاش بعض میں لیے کے ان ور دی کہہ زندگی ساز و سوز حدیث سے مسلمانوں سے وساطت نوا یہ کی آپ کہ کرے خدا کردیا۔ منکشف کو سربستہ رازہائے کے زندگی آمین۔ آجائے۔ راس کو ملک باشندگان ہم سنجی آگیں خلوص ، فقط جناب راجو خان فارسی مطالعات گوشہ گ علی ،١١ نمبر بکس پوسٹ ء٢٠١۶ ٨ ٢٠ وبرکاتہ لله ورحم علیکم السلام معارف مدیر مکرمی! خصوصی دونوں کے معارف’’‘‘ بالآخر ، بجے دو کے دوپہر آ واقعی ہوا، خوش جی کی۔ گردانی ور پر طور سرسری گئے۔ ہی مل شمارے لله گا۔ جائے کیا استفاده مدتوں سے جس ہے دستاویز تاریخی و علمی ایک یہ ۔ آمین فرمائے عطا اجر کا محنتوں کی ان کو مرتبین تعالیٰ ’’ن حسا حضرت قصائد منتخب ترجمانی اردو منظوم الریحان حدائق‘‘

۔ ہے خدمت ارسال تبصره برائے نسخے دو اور ہے نذر کی آپ نسخہ ایک کا خیر جویائے

نعمانی احمد رئیس ڈاکٹر

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.