علمیہ اخبار

الی المفسرین من القرآن فہم‘‘

Maarif - - اكتوبر معارف -

مضمون مفصل ایک نے صبری مسعود ڈاکٹر سے عنوان اس

ہدیہ باتیں مفید چند کی جس ہے۔ لکھا میں شماره کے اکتوبر ؍ المجتمع اور لفظ ہر کے مجید قرآن کہ ہیں سمجھتے لوگ کہ ہیں لکھتے ہیں۔ ناظرین کرنا رجوع طرف کی تفسیروں لیے کے سمجھنے کو آیت ہر کی اس وه اور معانی اشتقاقی و لغوی کے الفاظ قرآنی کہ لیے اس ہے۔ ضروری قرآن فہم بغیر کے واقفیت سے ان ہیں کیے بیان نے تفسیر علمائے جو مفاہیم فکر کی انسان انداز یہ کا سوچنے کیونکہ نہیں۔ درست خیال یہ ہے۔ مشکل بند دروازے کے صلاحیت کی خوض غورو و شعور کے اس اور مغلق کو کے رہنمائی و ہدایت انسانونکی نے تعالیٰ لله کو جس قرآن وه ہے۔ کردیتا کے اس یا آئے نہ میں سمجھ پورا کا پورا کو الناس عوام وه کیا نازل لیے کی لله یہ ہوجائیں۔ محدود تک طبقہ خاص کے امت اسرار و رموز تر تمام میں ضمن اس مطابق کے بیان کے نگار مقالہ ہے۔ بعید سے حکمت و شان کہ ہے خیال کا ایک ہے۔ قائل کا تفریط دوسرا اور افراط ایک ہیں فریق دو نہیں میں سمجھ بغیر کیے رجوع طرف کی تفسیر کتب آیت ہر کی قرآن کے منشا و مرضی اپنی کو مسلمان ہر کہ ہے مبتلا میں اس دوسرا آسکتی چار کو آیات قرآنی نے س عبا بن عبدلله حضرت ہے۔ حق کا تفسیر مطابق کی آیتوں ان قسم پہلی ہے۔ کیا پیش حل کا مسئلہ اس کرکے تقسیم میں خانوں نہیں۔ ضرورت کی تفسیر لیے کے سمجھنے کو جن ہیں آسان نہایت جو ہے و معانی صرف، و نحو قواعد عربی کو جن ہے کی آیتوں ان قسم دوسری ایسے ہے۔ سکتا سمجھ آسانی بہ شخص واقف سے بدیع و بیان اور بلاغت دشواری کوئی میں سمجھنے کو حصے بڑے کے کریم قرآن کو شخص ضرورت کی تاویل و تفسیر میں جن ہے کی آیتوں ان قسم تیسری ہوتی۔ نہیں العلم فی راسخین کا لوگوں عام لیے کے سمجھنے کو آیتوں ان ہے۔ آتی پیش چوتھی کی آیات قرآنی ہے۔ ضروری کرنا رجوع طرف کی تفسیر کتب یا سلسلہ اس ہے۔ کو تعالیٰ لله صرف علم کا تاویل صحیح کی جن ہے وه قسم بات یہ سے لحاظ اس ہے۔ جاسکتا کیا پیش مثالاً کو مقطعات حروف میں کو العلم فی راسخین علم کا یتوںا بعض کی مجید قرآن کہ ہے جاسکتی کہی کم انتہائی میں مقابلہ کے قرآنی آیات تمام تعداد کی جن( آیتوں بعض اور مطلب واضح کا اس تو ہے کو لله صرف واقفیت حقیقی سے تاویل کی ہیں) فہم لیے اس ہیں۔ سکتے سمجھ الناس عوام حصہ بیشتر کا قرآن کہ ہے یہ

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.