شذرات

بسم الله الرحمن الرحيم

Maarif - - اكتوبر ر -

کے ط انحط و زوال وه کھولیں انکھیں یں شره جس نے سرسید

تو یں ن کن ن یکسر اگر واپسی سے ں ج تھ وچک داخل یں رحلہ اس اور ی تب ل ک م انج ک اس وم ل ب اور ے وتی ضرور شکل سخت لق ت ک دونوں ل ن ن اور ل دادی کے ان ے۔ وت ر ظ یں شکل کی دی برب بھی ب خط ک جنگ ر ع الدولہ جواد یں ان نسے ج تھ سے ر درب غل لیے اپنے ئے بج کے چلنے پر راستہ ل پ اس نے سرسید لیکن ۔ تھ لا یں ن م ک ولی کوئی یں لات ح ان جو کی خود ین ت ک نزل اور راستہ ضرورت کی حوصلہ اور عزم بصیرت،ولی غیر لیے کے جس اور تھ ولی غیر جو کی غ د و دل کو ان سے طر کی فیض بدا تھی۔ کی زه ت ن ج ایک لیے کے جولانیوں کی ان تھیں وئی ت ودی صلاحیتیں تھی۔ نت ین ر کی وشوں ک اپنی کی ان خود تخلیق کی جس تھی ضرورت

ارد ی ر گ خلق پیروی کہ ازاں

رفتست رواں ک کہ ے برا رویم ی ن

طور خ اور کردی زبر و زیر کو ن ندوست نے جس ن طوف وه بل ست نوز ، تھ نہ کم سے ی صغر ت ی لیے کے نوں سل کے ں ی سے لے پ سے ن طوف نہ ز ابتدائی ک زندگی کی ان ۔ تھ پوشیده یں پرد کے وئے بدلتے کے ت و نظر ل ا جیسے سرسید لیکن تھ نہ ز ک سکوت کے حسوس ا کی ن طوف وئے بپھرتے تے، ا اس کر دیکھ کو تیور ہ ل ط بغور ک زندگی کی ان کی لے پ سے اگر تھے۔ کرسکتے والے نےآ پی یں د ب دراصل وه کہ ے وت حسوس ص تو ئے ج کی جن درت ۔ تھ رحلہ ک ری تی لیے کے ونے برا ده ع سے لات ح طر اسی یں ان ے کرتی نتخب لیے کے م ک ب کسی کو ت شخصی ان ی ک ن تو ائے ت و جب کہ ت ے ارتی گ سے راحل کے تربیت و لیم ت نکلیں۔ رو سر سے ن تح ا اس وه اور بنے نہ در ک ید فر دد ز ب گر دس ال رو فیض

کرد ی سیح انچہ بکنند م راں دی

د ب کے ی تب اور دی برب گیر ہ کی کہ ے یہ ہ وا کی ن ندوست جدید وه کی ئی سیح طر جس کی وم و لک نے وں ان اس پر م ای لو ن داست پرور رو یہ ے۔ ب ب روشن یت ن ایک ک ری ت ان اور سرسید ۔ سکت چرا یں ن نظریں سے اس بھی کوئی کہ ے م ر طر

کی تحریک نہ وتی تو آ برصغیر کے نوں سل کی صورت ل ح کی وتی

اس ک اندازه ن ل بھی ن اس یں۔ ن

ہ علا شبلی سرسید سے لیس چ ل س ے چھو تھے لیکن ان ک ر ش

سرسید کے ور ن رف یں وت ے۔ ل ک کے نتخب ر روزگ ه ت اس یں سرسید کے رف یں ل ش ونے ک اعزاز صر ہ علا شبلی صل کوح ے۔ ہ علا شبلی علی گ یں پروفیسر تھے لیکن ں و وں ان نے لب ط نہ عل زندگی اری۔ گ اس یں ہ شب یں ن کہ وں ان نے علی گ سے ت ب کچھ اخ و ده است ۔ کی تھ س ی علی گ تحریک کے لیے ان کی ت خد غیر ولی یت ا کی ل ح یں۔ ان کی ت ی تح اور ت تصنی ل ک کی رت ش اور نیک ی ن ک ہ ری بنیں اور اس ک اوازه لک کے ر ب دور دور تک ۔ نچ پ ایک سے ده زی ر ب خود سرسید نے اس ک اعترا ۔ کی نوی صب ید ا کے علاوه بھی ان کے ئد ص اور وں نظ یں سرسید، علی گ تحریک اور ل ک کی جیسی لاویزد اور ر و تصویر کشی کی گئی ے اس کی ل لنی شکل ے۔ تی س بد سے ہ علا شبلی کی زندگی کے اس لو پ ک اس طر ہ ل ط یں ن کی گی جو اس ک حق ۔ تھ سرسید سے ان کی روضہ ت ل خ ک نہ افس اتنی ر ب اور اتنے ختل انداز یں رای د گی کہ ت ب سے لوگوں نے اسے ت ی ح جھ س ۔ لی حیرت کی ت ب ے کہ ت ل خ اور اختلا رائے یں فرق لحوظ یں ن رکھ گی اور ی عل سط پر سرسید کی ض ب راآ سے اختلا کو ت ل خ پر ول ح کی ۔ گی ی عل لات یں اختلا رائے علم و یق تح کی دنی ک ایک ہ سل اصول ے اور ری ری ت یں اس کی دیں بنی ت ب ضبوط یں۔ طلبہ نے اپنے جلیل در ال ه ت اس سے ی عل اختلا کی اور اسے کبھی بھی سوئے ادب پر ول ح یں ن کی ۔ گی ل ا نظر اس ت ب سے وا یں کہ سرسید کے رف یں ہ علا شبلی تن یں ن تھےجو ان کی ض ب راآ اور ت نظری سے ق ات یں ن کرتے تھے۔ خود سرسید نے اپنے ت نظری خ طور سے بی ت نظری سے ق ات کو اتی ت ل ت کے سلسلہ یں کبھی ر ی یں ن ی بن اور نہ کبھی اپنے ت نظری کو دوسروں پر سلط کرنے کے ں خوا ے۔ ر ان کے شن کی یل تک یں جو لو ان کے ر ددگ تھے ان کو وه عزیز رکھتے تھے، اگرچہ ان کے ض ب ت نظری سے ان کو ق ات نہ ر و۔ سرسید نے ہ علا شبلی کو جو م و رتبہ دی اور ان کی ی عل فضیلت ک جس طر کھلے دل سے اعترا ، کی وه سرسید کی ت عظ کی بھی دلیل ے اور ہ علا شبلی کی دل

و غ د کی صلاحیتوں کی بھی۔ جب تک سرسید ت حی ے ر ہ علا شبلی

ت خد کی اس ل س و ه ترین ب کے زندگی اپنی اور ے ر وابستہ سے ل ک ایجوکیشنل اور سے اس بھی د ب کے دوشی سبک سے ل ک کیے۔ بسر یں ن انج سے رم ف پلی کے رنس ن ک جب ۔ ر ی ب لق ت ک ان سے رنس ن ک نظر سے یت حی کی ری سکری لے پ کے اس تو وئی تشکیل کی اردو ی تر وں ان وجود ب کے ت صروفی تر م ت اپنی اور ی پ اوپر کے ی ان ب انتخ رخصت سے ل ک ۔ کی ادا حق پورا ک اس اور کی بول کو داری ہ اس نے یشہ یں دل ل خی ک رانے گ ں و حصہ کچھ ک ل س بھی د ب کے ونے اور ت صروفی شدید دی۔ یں ن زت اج کی اس نے لات ح گو ر وجود بود ب کی ل ک وه ی، ر ز س دم و رفیق کی ان یشہ جو وجود ب کے ری بی کی نے بن ی یونیورس کو اس اور ے ر ں کوش یشہ لیے کے ی تر اور

۔ لی حصہ سے دلچسپی پوری یں کوششوں

کی رواں ه طر اس وئے۔ پیدا کو اکتوبر سرسید

بھر دنی پر و اس گے۔ ئیں وج پور ل س دوسو پر پیدائ کی ان کو ری ت حبت و یدت ع کو حسن اس کے لت و لک اور ے ر ج کی د ی کو ان یں کے ل ک وئے کیے ئم کے ان سے سبت ن اس ے۔ ر ج کی پی خرا ک پروگرام دوسر اور ر ین سی دد ت یں ی یونیورس سلم گ علی یل ج ن سرسید گے۔ ئیں ج لائے ل ع روبہ نصوبے م ا کئی اور گے ئیں ج کیے د ن کئی نے وں ان کہ ے صل ح ز تی ا یہ کو شبلی ہ علا صر یں رف کے ی اکی شبلی ین ن ص دارال یں ان یں۔ چھو ر دگ ی ادار ی عل اور ی لی ت سے وسس کے اس ے۔ صل ح یت حی کی ر دگ ی ی عل م ا سے سب کی ان کو کے برصغیر ده زی بھی سے اس اور بھی ک راسم گوں گون کے سرسید عظیم کی ان یں ین ن ص دارال کہ تھ ض ت ک ت ن احس کے ان پر نوں سل کی پی رانہ ن ک حبت و یدت ع یں ان اور ئے ج کی د ی کو ت خد ن الش پر عنوان کے نویت عصری کی سرسید سے صد اس ئے۔ ج د ان ک ر ین سی روزه دو ایک کو بر نو یکم اور اکتوبر یں ین ن ص دارال ان والے ونے ئ ش یں گز یو ی انس گ علی پر و اس ے۔ ر ج کی یں ل ع بھی اجرا ک سرسید رات ش ب انتخ ی و یت ن ایک ک اداریوں کے س شن سرسید ور ش ب انتخ یہ ے۔ کرر ئ ش ین ن ص دارال جسے ، گ ئےآ کی اس یں یدان کے سی شن سرسید ے۔ کی نے حب ص س عب اصغر پروفیسر کی سرسید کہ ے کی ت ب اس ضرورت وگی۔ کی فہ اض م ا یت ن ایک یت حی اور ئے ج کی ئ ش د ب کے تدوین و ترتیب سب ن تحریرونکو ون د غیر م ت

ئے۔ ج کی وار راه کی ده است کے علم ل ا سے ہ ور تی ی اس

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.