شذرات

Maarif - - ء٢٠١٨ ستمبر معارف -

والوں ہونے آباد یہاں آکر سے باہر ہیں۔ آباد میں تعداد بڑی مسلمان میں آسام نقلِسےبنگالتحتکےاسبابمختلفہے۔سےبنگالعلاقہپڑوسیتعلقکابیشترمیں کے انگریزوں ہے۔ رہا جاری سے صدیوں سلسلہ کا ہونے آباد میں آسام کرکے مکانی لیے کے کاشت کی چاء زمین کی آسام ہوا۔ اضافہ بہت میں اس میں حکومت عہد تھے۔ نہیں دستیاب مزدور میں تعداد مطلوبہ لیے کے کام اس میں آسام لیکن تھی موزوں کا لانے کو مزدوروں میں تعداد بڑی سے بنگال لیے کے کرنے پورا کو کمی اس ساتھ کے وقت تعداد کی مزدوروں والے ہونے آباد میں آسام طرح اس ہوا۔ شروع سلسلہ اضافہ اتنا میں تعداد کی والوں ہونے منتقل آسام سے بنگال پہلے سے آزادی گئی۔ بڑھتی کی کرنے تذکره پر طور خاص کا اس میں شماری مردم کی ء١٩٣١ کہ تھا ہوچکا سالپچیسگذشتہمطابقکےسپرنٹنڈنٹکےشماریمردمگئی۔کیمحسوسضرورت کے اس اور تھا واقعہ اہم سے سب یہ والا ہونے پذیر ظہور میں آسام میں عرصہ کے واقعہ امر یہ چنانچہ گا۔ جائے بدل لیے کے ہمیشہ تناسب کا آبادی میں آسام میں نتیجہ پہلے سے تقسیم کی ملک اور آزادی اکثریت غالب کی بنگالیوں موجود میں آسام کہ ہے تقسیم کی ملک کہ جاسکتا کیا نہیں انکار بہرحال سے امکان اس تھی۔ ہوچکی آباد وہاں اخذ نتیجہ یہ لیکن ہو آئی میں عمل مکانی نقلِ قدرکسی وقت کے قیام کے دیش بنگلہ اور بڑی کوئی کی مسلمانوں بنگالی میں قریب ماضی کہ ہے نہیں جواز کوئی کا کرنے کی مسلمانوں بنگالی آباد وہاں چنانچہ ہے۔ ہوگئی داخل میں آسام سے دیش بنگلہ تعداد مزدوروں میں اقتدار دور کے انگریزوں جو ہیں اولاد کی وطن تارکین ان اکثریت غالب سے دیش بنگلہ اگر میں قریبماضی ہوگئے۔ آباد آکر یہاں یا گئے لائے سے حیثیت کی

ہیں۔ کم حدتک لحاظ ناقابل وه تو ہیں بھی ہوئے واقعات کے مکانی نقلِ تقسیم ملک کے بعد بڑے زور و شور سے یہ پروپگنڈه کیا گیا کہ آسام کو اساورہےلاحقخطرهبڑاسےوالوںآنےیہاںکرکےدراندازیسےپاکستانمشرقی سےوجہکیاسجائے۔بدلہیکلچرکاعلاقہاسسےاسکہہےاندیشہسختکابات ء١٩۵١ میں پہلا نیشنل رجسٹر آف سٹی زنس (NRC) تیار کیا گیا۔ یہ ملک کی تاریخ میں اپنی نوعیت کا پہلا رجسٹر تھا۔ ء١٩٧١ میں مشرقی پاکستان کے سقوط اور بنگلہ کےدیش قیام کے بعد پھر نےمسئلہاس سر اٹھایا کہااور کہگیا وہاں بڑےسے پیمانے پر آسام میں نقلِ مکانی کے واقعات رونما ہوئے ہیں۔ اس مزعومہ دراندازی کے خلاف ء١٩٧٠ کی دہائی میں آل آسام اسٹوڈنٹس یونین (AASU) نے ایک پُرزور تحریک چلائی جو بعدمیں تشدد کی راه پر چل پڑی۔ فروری ء١٩٨٣ میں نلّی کا خوں ریز تصادم اسی کا نتیجہ تھا۔ اس میں تین ہزار بے گناه مسلمان مارے گئے۔ آج تک اس میں ملوث کسی شخص کے خلاف نہ کوئی فرد جرم عاید کی گئی اور نہ کسی کو کوئی سزا ہوئی۔ اس ماحول میں ء١٩٨۵ میں راجیو گاندھی کی زیر قیادت مرکزی حکومت

معاہده ایک درمیان کے گروہوں دوسرے کے نوع اس اور یونین اسٹوڈنٹس آسام آل اور ء١٩٧١ مارچ ؍٢۴ سے روکیاس ہے۔ جاتا کیا یاد سے نامکےاکارڈ آسام کوجس ہوا تاریخ اس لوگ جو گیا۔ کرلیا تسلیم پر طور کے فاصل حدِ میں سلسلہ کے مکانی نقلِ کو غیر اور درانداز کو ان گے کرسکیں نہیں ثابت موجودگی اپنی میں آسام پہلے سے نیشنل کے ء١٩۵١ میں روشنی کی شقوں کی معاہده اس گا۔ جائے دیا دے قرار ملکی اس نے شخص ایک میں ء٢٠٠٩ سکا۔ نہیں ہو ایسا لیکن تھا جانا کیا اپڈیٹ کو رجسٹر ؍٣١کہدیاحکمنےکورٹسپریممیںء٢٠١۴کیا۔رجوعسےکورٹسپریممیںسلسلہ کی عالیہ عدالت کام یہ کہ یہ اور جائے کرلیا مکمل کو کام اس تک ء٢٠١۶ جنوری تکمیل کی کام اس تو پر وقت ہوئے کیے مقرر کے عدالت گا۔ پائے انجام میں نگرانی ؍٣٠ اب اور گیا کیا شائع ڈرافٹ پہلا کا اس میں ء٢٠١٧ دسمبر البتہ ہوسکی نہیں کے آسام میں نتیجہ کے اس اور ہے گیا کردیا شائع بھی ڈرافٹ فائنل کا اس کو جولائی ہے۔ ملین ٩٫٣٢ آبادی کل کی آسام ہے۔ سامنا کا آزمائش سخت بڑی ایک کو مسلمانوں ہیں۔ نہیں موجود نام کے لوگوں لاکھ چالیس یعنی ملین چار سے میں ان میں ڈرافٹ اس مسلمانوں نادار اور غریب اکثریت غالب کی ان کہ نہیں ضرورت چنداں کی کہنے یہ میں لسٹ پہلی نام کا جن ہیں ایسے لوگ ہزار پچیس لاکھ ایک سے میں ان ہے۔ کی

ہے۔ غائب سے لسٹ دوسری لیکن تھا موجود ہوئیپیداصورتجومیں سامآبعدکےاشاعتکیڈرافٹفائنلکےآرسیاین

میں زد کی خطرات سخت مستقبل کا انسانوں لاکھ چالیس ہے۔ سنگین حد بے وه ہے یہ ہے۔ مشکل کہنا کچھ میں بارے کے اس گا بیٹھے کروٹ کس اونٹ یہ کار انجام ہے۔ کی احتیاط معمولی غیر جس میں تیاری کی دستاویز حسّاس ایسی کہ ہے ظاہر غریب و عجیب بڑی سے وجہ کی جس جاسکا کیا نہیں اہتمام کا اس تھی ضرورت نام کے افراد بعض کے خاندان ہی ایک پر طور کے مثال ہے۔ ہوگئی پیدا حال صورت املا میں ناموں ہیں۔ غائب نام کے افراد دوسرے بعض جبکہ ہیں موجود میں ڈرافٹ اس سرکاری ہیں۔ گئے کردیے مسترد ریکارڈ سے بہت سے وجہ کی غلطیوں معمولی کی سب ہم سے اس ہیں ہوتی غلطیاں جیسی کی املا میں نام کے مسلمانوں میں رکارڈس فائنل کو نام کے لوگوں جن کہ ہے رہی کہہ ہی اتنا صرف گورنمنٹ ابھی ہیں۔ واقف دیا موقع پورا کا کرنے ثابت کو استحقاق اپنے کو ان ہے سکی مل نہیں جگہ میں ڈرافٹ عملاً میں مدت مختصر کی مہینوں تین دستیاب لیے کے کام اس یہ کیا لیکن گا۔ جائے کام مراکز ١٠٠ پر منصوبہ اس وقت اس ہے۔ میں نفی جواب کا اس ہے۔ بھی ممکن سکتے۔ دے نہیں انجام کام یہ وه میں مدت اس کہ ہے واضح بالکل یہ ہیں۔ کررہے ثابت شہریت اپنی مسلمان جو کہ ہے آرہی کہتی یہ سے ہی شروع جماعت حکمراں ہندوؤں البتہ گا۔ جائے کردیا بدر ملک کر دے قرار ملکی غیر کو ان گے کرسکیں نہیں کوئی ایسا ساتھ کے دیش بنگلہ کہ رہے یاد یہ گا۔ جائے کیا نہیں معاملہ یہ ساتھ کے بھی کو آدمی ایک کسی کے طرح اس دیش بنگلہ کہ ہے یقینی بات یہ ہے۔ نہیں معاہده

ایک کا لوگوں وطن بے بھی میں ہندوستان طرح کی روہنگیا کیا گا۔ کرے نہیں قبول سے حقوق کے شہریت لیکن پر سرزمین اس تو گا رہے جو گا آئے میں وجود طبقہ ایسے چھ وقت اس میں آسام گا۔ جائے رکھا میں کیمپ بندی نظر کو ان کیا ہوگا۔ محروم ملکی غیر کو جن ہے گیا رکھا کو لوگوں ایسے ہزار ایک جہاں ہیں کیمپ بندی نظر الاقوامی بین سے جن ہے جارہا رکھا میں حالات ایسے کو ان ہے۔ جاچکا دیا قرار حدتک کسی کا ارادوں کے حکومت ہے۔ ہوتی ورزی خلاف ہوئی کھلی کی قوانین کی کھولنے مراکز مزید کے طرح اس وه کہ ہے جاسکتا لگایا سے بات اس اندازه کوئی میں کرنے حل کے مسئلہ اس کو حکومت کہ ہے واضح یہ ہے۔ مند خواہش ابھارنے جذبات کے منافرت درمیان کے طبقات مختلف اسے وه بلکہ ہے نہیں دلچسپی

ہے۔ چاہتی کرنا استعمال لیے کے سیاست کی ووٹ اسے اور ضروری لیے کے ان ہیں آسکے نہیں میں ڈرافٹ فائنل نام کے لوگوں جن سلسلہاسسےانتظامیہمقامی متعصب اورکرپٹہے۔ نہیں آسانحصولکادستاویزوں کام کا جن ٹریبیونل فارنر ہے۔ جاسکتی کی سے ہی مشکل توقع کی تعاون کسی میں تہائی دو سے میں ان ہے، کرنا چک کو کاغذات والے جانے کیے پیش میں ثبوت مستقل کے عدلیہ کو مراکز ان ہیں۔ گئے کیے قائم ذریعہ کے جماعت حکمراں موجوده کی جن ہے مشتمل پر وکلاء مقامی ان اکثریت کی ان بلکہ چلاتے نہیں ارکان آزاد اور ہیں۔ رکھتے تعلق سے قبائل مقامی وکلاء یہہے۔ گیا کیا حاصل پر طوروقتیکو خدمات زیاده بہت لیے کے جاننے کو احساسات اور جذبات کے ان میں سلسلہ کے مسلمانوں ماحول کے عداوت و نفرت سے مسلمانوں خود وه ہے۔ نہیں ضرورت کی نظر دقت کولوگوںسےبہتتوطرفایکسےوجہکیغربتاورجہالتہیں۔بڑھےپلےمیں خواه خاطر کا حفاظت کی ان چنانچہ تھا نہیں ہی اندازه صحیح کا اہمیت کی رکارڈس ان کو ان نہ اور ہیں کراتے رجسٹریشن تو نہ کا بچوں اپنے وه جاسکا۔ کیا نہیں انتظام نذر کی سیلابوں والے آنے بار بار رکارڈس کے لوگوں سے بہت ہیں۔ بھیجتے اسکول کو عمر اس شادی کی ان اکثر کہ ہے یہ مشکل ایک میں سلسلہ کے خواتین ہوگئے۔ طرح اس ہے۔ ہوتا حاصل حق کا ووٹنگ کو ان جب ہے ہوجاتی پہلے سے پہنچنے کا ان ساتھ کے نام کے شوہر آتا۔ نہیں ساتھ کے نام کے والد نام کا ان میں لسٹ ووٹنگ مسلم کا آسام وقت اس ہے۔ نہیں قبول قابل میں نگاه کی قانون وه بھی تو ہو درج نام دردناک حددرجہحال صورت اور ہے دوچار سے المیہانسانی بڑے بہت ایک معاشره میںسلسلہ اس ہوگا۔شروع بھیباہرسے آسام سلسلہ یہ توبدلانہرخ کاحالات اگر ہے۔ کے مغزی بیدار بہت وقت اس سے طور خاص میں آسام ہے۔ رہا آہی تو نام کا بنگال ایک وه ہیں کررہی کام وہاں وقت اس تنظیمیں جو ہے۔ ضرورت کی کرنے کام ساتھ ضرورت کی وقت تعاون ممکن ہر ساتھ کے ان ہیں۔ رہی دے انجام خدمت بڑی بہت صورت کوئیکینمٹنے سے مصیبت اس ہیذریعہکےاشتراک اور تعاونباہمیہے۔

ہے۔ ہوسکتی پیدا

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.