ندوة العلماء اور ریاست بہاول پور

ڈاکٹر عصمت درانی

Maarif - - ء٢٠١٨ ستمبر معارف -

) ٢(

از کی عملہ اور نصاب میں سربراہی کی ندوی سلیمان سید مولانا کمیٹی ایک میں نگرانی کی تعلیم وزیر کے ریاست لیے کے تنظیم نو سر محمد مولانا ء)،١٩٩١-١٩٠٨( انصاری ظفر مولانا میں گئی۔اس دی تشکیل دیگر چند اور لاہور کالج اورینٹل پرنسپل سابق ء)،١٩۶٣ -١٨٨٣( شفیع صنعتی ساتھ ساتھ کے تعلیم دینی میں نصاب تھے۔ شامل بھی کرام علمائے کے یونیورسٹی پنجاب کو امتحانات کے گیا۔جامعہ کیا شامل بھی کو تربیت پنجاب کیونکہ گیا۔ کیا اہتمام کا لانے پر درجہ مقابل کے شرقیہ علوم جامعہ کہ پایا طے لیے تھیں۔اس ہوتی نہیں کلاسز کی علامہ میں یونیورسٹی کو سفارشات ان گی۔ رہیں جاتی دی سابق حسب سندات کی جماعت اس میں کی ندوی سلیمان سید کو ء١٩۵٢ جولائی ؍١٣ میں کراچی شکل قطعی مطابق کے تجاویز گئی۔ان دی میں اجلاس والے ہونے منعقد میں صدارت عبور، رشد، ورود، ہوئے: مقرر درجات چھ ذیل درج کے تعلیم میں جامعہ

)۵ ص ء،١٩۵٢ جولائی، ؍١٧ گزٹ، گورنمنٹ( تحقیق۔ مہارت، فوض، پر مقامات متعدد بھی میں مکتوبات کے ندوی سلیمان سید مولانا

کا تعلق کے ان سے عمائد کے ریاست اس اور ہے ملتا ذکر کا پور بہاول جو الدین، شمس میجر تعلیم وزیر کے پور بہاول ریاست مثلاً ہے، ہوتا علم سیاسی اور ادبی، علمی اپنی اور تھے صاحبزادے کے حسین غلام مولانا سےتھے، مینسے شخصیات ممتاز کی پور بہاول باعث کے سرگرمیوں ہے، ہوتا سے مکتوبات ان کاعلم مراسلت اور خاطر تعلق کے ندوی سلیمان لکھے۔ نام کے ء)١٩٧٧-١٨٩٢( بادی دریا عبدالماجد مولانا نے انہوں جو فروری اجرانگار( رسالہ اپنے نے ء)١٩۶۶ -١٨٨۴( پوری فتح نیاز مثلاً جاتا کہا رسالہ ترجمان کا خیالوں آزاد اور پسندوں عقلیت جسےء)،١٩٢٢ اسسٹنٹ پروفیسر، شعبۂ فارسی، اسلامیہ یونیورسٹی، بہاول پور۔

ایک کیااور شروع سلسلہ کا لکھنے تحریریں خلاف کے مذہب میں تھا، ۔نگار دیا کر انکار سے ہونے الہامی کے مجید کلام میں جواب کے استفسار جوابات و اعتراضات اور موافقت و مخالفت کی اس میں شماروں کئی کے معارف بھی نے ندوی سلیمان سید تحت کے جوش مذہبی رہا۔ چلتا سلسلہ کا دیا جواب مدلل کا اس میں شماروں کے ء١٩۴٠ دسمبر اور نومبر اکتوبر، جیسی پور بہاول نگارکی جب لیکن )٣٨٨ ص ء،٢٠١١ ندوی، الدین معین( تشویش پر طور بجا انہیں تو پھیلیں افواہیں کی اشاعت سے ریاست اسلامی لکھا: نام کے دربادی عبدالماجد کو ء١٩۴٠ جولائی ؍٧ چنانچہ ہوئی۔ لاحق دعویٰ کا اشاعت کی نگار)( اس میں پور بہاول اور بھوپال’’

ہے۔ غلط بھی اور تو میں پور بہاول ہے۔ ہوتا معلوم سا غلط لکھتا میں خدمت کی پور بہاول تعلیم صاحب وزیر میں، بہرحال حصہ( ١٩٨۶ ندوی، سلیمان( ۔ہیں‘‘ آدمی مذہبی اور نیک ہوں،

)٩١ ص دوم)، عبدالماجد نے انہوں میں ء١٩۴٠ گست ا ؍١۴ مرقومہ مکتوب اگلے درس اور اداروں سرکاری کے حیدرآباد خریداری کی کونگار بادی دریا ہے: کیا اظہار کا اطمینان ہوئے دیتے خبر کی ہونے بند میں گاہوں بھی جانتا کوئی اسے وہاں نکلی، غلط بات کی پور بہاول’’

) ٩٢ ص دوم)، حصہ( ١٩٨۶ ندوی، سلیمان( ۔نہیں‘‘ اجرا( صدق مجلہ کے بادی دریا عبدالماجد کو ء١٩۴٠ جولائی ؍٧ ہوئے، شائع مضامین متعلق کے مندرجات ان کے نگار میں ء)١٩٣۵ مئی لکھا: کو بادی دریا عبدالماجد نے انہوں بعد کے مطالعہ کے جن

دیجیے: بھجوا پر پتا اس نمبر یہ کے صدق’’

تعلیم وزیر صاحب، محمد الدین شمس میجر مرتبت ۔عالی١ انسپکٹر چیف ، صاحب خان محمد بقا ۔جناب٢ پور۔ بہاول، تعلیمی، مراسلات مدیر صاحب، عبدلله ۔مولانا٣ پور۔ بہاولتعلیم،

)٩١ ص دوم، حصہ، ء١٩٨۶، ندوی سلیمان( ۔پور‘‘ بہاول کیا ترجمہ انگریزی کا کریم قرآن نے بادی دریا عبدالماجد مولانا نے دہلوی علی مرتضیٰ سید نسخے کچھ کے مسودے ابتدائی کے جس، درمیان کے جس دیے۔ کروا طبع سے شملہ سے نام اول پرپارهٔ خرچ اپنے اور مشوره و صلاح پاس کے احباب کرمختلف لگا ورق ساده ایک ایک ۔)٢٩۴ ص، ء١٩٩۶بادی، دریا عبدالماجد( گیا بھیجا لیے کے زنی راے

حیدرآباد کو تفسیر اس میں خط کو ندوی سلیمان سید نے عبدالماجد مولانا تک احباب دوست علم پورکے بہاول علاوه کے رئیسوں کے بھوپال اور کتاب اور ہو خوب اشاعت سے سرپرستی کی اس تاکہ کہا کوبھی پہنچانے اس )١٣٠ ص دوم، حصہ ،١٩٨۶، ندوی سلیمان( پہنچے۔ تک خانوں کتب،

لکھا: کو ء١٩۴٣ مئی ؍١٣ نے ندوی سلیمان سید میں جواب کے پر مقامات مناسب لله انشاء گی ئیںآ کاپیاں جو کی اول پارهٔ ’’

آباد، حیدر بہادر، جنگ یار مہدی نواب مثلاً گی۔ جائیں دی بھیج لیاقت سر صاحب، محمد ولی قاضی ء دبیرالانشا صاحب، شعیب پور بہاول صاحب عبدالقادر سر جسٹس بھوپال، صاحب علی خط ابھی کو الدین) شمس میجر( تعلیم وزیر پورکے بہاول )،١٠(

)١٣٢ص:دوم، حصہ، ء١٩٨۶، ندوی سلیمان ( ۔دیا‘‘ لکھ میں میں مآخذ خطوط نام کے ندوی سلیمان کے الدین شمس میجر

محمد فضل مولوی جج سول کے پور بہاول ریاست ہینلیکن نہیں دستیاب نام کے ء)١٩٨٣ جولائی ؍٢۶ -١٩١٨( )،١١( فاروقی لله فضل المعروف ہے: جاتا کیا نقل یہاں تبرکاً جو )١٢( ہے ملتا خط ایک کا ان اسلامی نظام مجلس دفتر

گڑھ اعظم منزل، شبلی علیکم السلام مکرم کی اسلامی نظام کو آپ کہ ہوئی شکریہ۔خوشی کا نامہ عنایت خاص کوئی متعلق کے اس تک ابھی ہے۔ دلچسپی سے تحریک چیز کوئی جب ہیں۔ تحریریں قلمی سب ہے۔ چھپا نہیں لٹریچر

والسلام ہوگی۔ مرسل تو گی چھپے سلیمان سید

ء١٩۴١ مارچ ؍١٢

کے ریاست نے جنہوں فرزند، دوسرے کے العلماء ندوة دارالعلوم

ندوة دارالعلوم ہیں۔ ندوی ناظم محمد مولانا دیں، انجام خدمات نمایاں لیے دس میں علمی مادر ندوی، ناظم محمد مولانا التحصیل فارغ کے العلماء میں ء١٩۴٨ مئی بعد کے دینے انجام خدمات انتظامی و تدریسی برس پردسمبر ایما کے ندوی سلیمان سید تو ہوئے مقیم پاکستان کے کر ہجرت وه ہوئے۔ پرمنتخب عہدے کے الجامعہ شیخ کے عباسیہ کوجامعہ ء١٩۵١

ص ء،١٩٩۴عبدالرشید، رحمت،( تھے۔ کرتے دیا بھی درس کا کشاف سکتا جا کہا دور سنہرا کا عباسیہ جامعہ دور کا براہی سر کی مولانا ۔)٢١٨ وه ہوا، حاصل فروغ خوب کو سرگرمیوں ادبی و علمی میں جس ہے، عباسیہ جامعہ میں ء١٩۵٠ ہی میں دور کے ان تھے، الجامعہ شیخ چوتھے معروفسےنامکے OldCampus جو کیمپس، عباسیہ موجوده( عمارت کی غلام’’ موجود باہر کے ہال مرکزی کے جامعہ ہوئی۔ مکمل تعمیر کی ہے) نے ندوی ناظم مینمولانا ء١٩۵٢جو تختی مرمرین کی ہال‘‘ گھوٹوی محمد ص ، الدین نصیر شبلی،( ہے موجود تک آج تھی، لگائی سے ہاتھوں اپنے اکیڈمی اردو میں پور بہاول کو ء١٩۵٩ اکتوبر ؍٩ میں دور ۔اسی)١۶٨ منعقد میں عباسیہ جامعہ تقریب افتتاحی کی جس گئی، رکھی بنیاد کی )١٣( سمیت عملہ اور فرنیچر لیے کے اکیڈمی اردو میں جامعہ نے مولانا ہوئی۔ وه ہوا۔ آغاز باقاعده کا کام کے اکیڈمی اس یوں اور دیا کر مختص کمره ایک ازاں بعد اور تھے رکن کے عاملہ و انتظامیہ مجلس پہلی کی اکیڈمی اردو انجام معاوضہ بلا خدمت یہ کی اکیڈمی نے انہوں رہے۔ بھی عمومی معتمد

)١٢ ص علی، عارف سید ( دی۔ پر رخصت کی سال کودو ء١٩۶١نومبر ندوی ناظم محمد مولانا

بدل نقشہ کا جامعہ تو آئے واپس جب گئے۔ لے تشریف مدینہ اسلامیہ جامعہ نام کے اسلامیہ‘‘ جامعہ’’ میں ء١٩۶٣اکتوبر نے خان ایوب تھا۔صدر چکا انصرام و انتظام کا اس ذریعے کے آرڈیننس ایک کے کر افتتاح کا اس سے شعبۂ کو ان گیا، دیا کر ختم عہده کا الجامعہ شیخ اور کیا سپرد کے اوقاف کی الجامعہ شیخ میں ادارے جس وه لیکن گئی کی پیش براہی سر کی عربی محمد ( کیا نہ گوارا بننا شعبہ صدر وہاںتھے، چکے کر کام سے حیثیت ناظم بحیثیت میں ہی پور بہاول تک ء١٩۶٩ نے مولانا ۔)١١۴ صصادق، منتقل کراچی سے پور بہاول میں ء١٩۶٩دیں۔ انجام خدمات دینیہ امور ،١ ص شیخ، راشد( کیا۔ انتقال کو ء٢٠٠٠ جون ٩ جہاں ہوئے

( https://fridayspecial.com.pk کی پور بہاول’’ مضمون ایک اپنے نے ندوی ناظم محمد مولانا

ہے: دہرایا کو یادوں کی قیام سالہ اٹھاره یہاں میں میں‘‘ گیا بیت جگ ایک ہوئے چھوڑے پور بہاول مجھے کہ گو’’ بہاول ہے۔ تازه طرح کی ازل روز میں دل یاد کی اس مگر، ہے اب اور ہیں وابستہ یادیں گوار خوش سی بہت میری ساتھ کے پور علم اور دینی اس ہے… گئی کر اختیار صورت دائمی یاد یہ تو یاد

وقت اس میں زندگی علمی ابتدائی نے میں ذکر کا سرزمین پرور لکھنو العلماء ندوة دارالعلوم میں قبل سال ۵۴ سے آج جب تھا سنا ہندوستان دوستی، علم کی روا فرماں عباسی کے خطہ اس تھا۔ میں قدیم کے خاندان حکمراں اس ساتھ کے علما اور کدوں دانش کے شاندار و وسیع کی ندوه دارالعلوم تھیں۔ سنی باتیں کی تعلق کی تعمیر طرز مغل جو عمارت قدیم منزلہ دو والی محرابوں محمد صادق پور بہاول امیر میں تعمیر کی اس ہے، کرتی عکاسی ندوی، ناظم( ۔تھا‘‘ لیا حصہ بڑا نے والده کی مرحوم عباسی خان

۔)۵۶ ص محدث محقق، مصنف، معروف التحصیل فارغ کے العلماء ندوة

اسی ء)١٩٩٩ -١٩١۵( نعمانی عبدالرشید مولانا منقول و معقول جامع ء)١٩۴٢ -١٨۶۴( ٹونکی خان حسن حیدر مولانا محدث نامور کے ادارے مولانا نے انہوں ندوی، حسنی عبدالحی بلال ۔بقول تھے شاگرد خاص کے کہ لیا کر جذب اندر اپنے طرح اس کو زندگی زاہدانہ اور صفات و ذات کی نے حسن حیدر مولانا ۔)٩ ص نعمانی، عبدالرشید( گئے بن مثنی کے مولانا بخشی۔ جلا کو جوہر کے ان اور فرمائی شفقت خصوصی پر ان بھی احیاء مجلس’’ اور تھے بھی رفیق کے العلماء ندوة نعمانی، عبدالرشید میں ء١٩٨٨ بھی۔ رکین رکن کے دکن آباد حیدر ‘‘ النعمانیہ المعارف بعد کے وفات اچانک کی الحسن ضیاء مولانا الحدیث شیخ کے دارالعلوم تک ماه تین اور لائے تشریف ندوه پر درخواست کی ندوی عبدالرشید مولانا بعد کے اس لیکن نبھائی۔ داری ذمہ کی تدریس کی شریف بخاری باقاعده رہے۔ کرتے استفاده سے ان ذریعے کے مراسلت اساتذه و طلبہ متعدد بھی کے قیام میں دارالعلوم اور لائے تشریف ہندوستان پھر مولانا میں ء١٩٩١ لغات میں تصانیف مشہور کی ان رہے۔ دیتے درس کا نخبہ شرح دوران یطالع لمن الحاجۃ الیہ ماتمس حدیث، اصول فی المدخل جلدیں)، تین ( القرآن فی حنفیہ مکانۃابی ترجمہ)، اردوحدیث( علم اور ماجہ ابن ماجہ، ابن سنن میں، نظر کی سنت ہل ا شخصیت کی یزید مثلاً رسائل، متعدد الحدیثاور علم بھیس کے تحقیق ناصبیت، ، بہتان پر صحابہ اکابرافترا، پر کربلا شہدائے

۔)٢١ -٩ ص نعمانی، عبدالرشید ہیں( شامل وغیره میں اشرف دارالعلوم بعد کے کرنے ہجرت پاکستان نعمانی عبدالرشید رہے، وابستہ سے کراچی للبنات صدیقہ عائشہ مدرسہ اور یار ٹنڈوالا آباد مقر صدر کے اسلامیات شعبۂ کے پور بہاولعباسیہ، جامعہ میں ء١٩۶٣ میں ء)١٩٧٧-١٩٧٣عظمی( وزارت دور کے بھٹو علی ذوالفقار ہوئے۔

لیجسلیٹو پنجاب گیا۔ دیا کر حوالے کے تعلیم محکمہ کو اسلامیہ جامعہ منظوری کی قیام کے یونیورسٹی اسلامیہ میں ء١٩٧۵ مارچ ؍۴ نے اسمبلی ہوا چلن کا تعلیم مخلوط یہاں ۔)٢٣٠ -٢٢۴ ص انصاری، سلیم فرخ( دی مصاحبہ( دی کر ترک ملازمت یہ باعث کے ناپسندیدگی اس میں ء١٩٧۶تو

۔ ء)٢٠١٨ اپریل؍ ۶،۵ بتاریخ ، نعمانی عبدالشہید سہسرامی شیخ عبدالرشید مولانا فرزند اور ایک کے العلماء ندوة

زیر لاہورمیں کالج اورینٹل اور العلماء ندوة دیوبند، دارالعلوم ء)١٩٢٢( تعینات مدرس بطور میں پور بہاول عباسیہ جامعہ میں ء١٩٣٨ رہے۔ تعلیم بھی میں دوار ا کے یونیورسٹی اسلامیہ اور اسلامیہ جامعہازاں، ہوئے۔بعد و تصنیف ساتھ ساتھ رہے۔ دیتے نجام ا خدمات تدریسی میں عربی شعبۂ فی السھـلا اطریقـہ اور، العربیـہ المقالات رکھا۔ جاری بھی شغل کا تالیف سبکدوش سے شعبہ اسی میں ء١٩٨۴ہیں۔ تصانیف ذکر قابل العربیـہ محمد( ہوئی۔ تدفین پورمیں بہاول اور پائی وفات میں یارک ہوئے۔نیو

۔)١۴٢ ص صادق،

) ٣(

شروانی الرحمان حبیب مولانا گار خدمت دیرینہ کے العلماء ندوة کے نسخے ایک کے یمین ابن کلیات موجود میں بخش گنج خانہ کتب کے نواب نسخہ یہ ہے۔ ہوتا علم کا تعلق سے پور بہاول کے ان سے مندرجات تھا۔سلطنت موجود میں سلطانی‘‘ خانۂ کتب’’ کے خامس خان محمد صادق کتب پر موقع کے آمد میناپنی پور بہاول نے علوم منتظم کے دکن آصفیہ وه توکہاکہ دیکھا کو یمین ابن کلیات موجود اوروہاں کیا بھی دوره کا خانہ یاب نا یہ میں پور بہاول کر جا اب تھے۔ میں تلاش کی دیوان اس سے مدت اور گئے لے دکن ساتھ اپنے عاریۃً کو دیوان اس وه ہے۔ ہوا دستیاب نسخہ ص ء،١٩۴٠ ستمبر، عزیز،( تھا کیا واپس دیوان اصل بعد کے لینے کرا نقل پر صفحات ١٠٢٧ نسخہ ضخیم یہ موجود میں بخش گنج خانہ کتب ۔)٢٨ یادداشتیں کئی کی شروانی خاں الرحمان حبیب مولانا پر جس ہے مشتمل ١٠٢٣ نمبر صفحہ ہے۔ گیا لکھا سے پنسل میں بعد نمبر صفحہ ہیں۔ درج خاں الرحمان حبیب مولانا پر ١٠٢٣ صفحہ ہیں۔ الاصل بیاض ١٠٢۴ اور ہے درج کی ھ١٣۴١ صفرالمظفر ؍٢٢یادداشت پہلی سے سب کی شروانی

: ہے لکھی کیفیت مکمل کی نسخے اس نے انہوں میں جس فرمائش میری میں دکن آباد حیدر نسخہ یہ کا یمین ابن کلیات’’ خاص کے پور بہاول صاحب نواب نسخہ عنہ منقول گیا۔ لکھا سے

کا اس نے انصاری صاحب احمد رشید مولوی تھا۔ میں خانہ کتاب کی پریسڈنٹ کے کونسل صاحب بخش سررحیم مولوی لگایا۔ پتا عنی لله جزاہما ملا، کو مجھ واسطے کے نقل سے مہربانی

)٢٢٨ -٢۵٠ص خورشید، عطا( ۔…‘‘خیرا نے ممبران وفدکے کے گڑھ علی نیورسٹی یو مسلم میں ء١٩٣٩ انتخاب اور دوستی علم کی صاحب نواب اور کیا دوره کا سلطانی خانۂ کتب -١٨٩٧( شروانی الرحمان عبید محمد مولوی ہوئے۔ متاثر بہت سے اپنے کر جا واپس نے انہوں تھے۔ شامل میں وفد اس بھی ء)١٩٩٢ معجم موجود میں سلطانی خانہ کتب سے شروانی خان الرحمان والدحبیب

: لکھا کو الرحمان عزیز انہوننے پر جس کیا۔ ذکر کا طبرانی کبیر ایک ہوئی۔ مسرت دلی کر پڑھ کیفیت کی طبرانی کبیر معجم’’ مشرف سے زیارت کی اس میں کاش ہے۔ سرمایہ علمی نادر

)۴١ ص ء،١٩۴٠ اپریل عزیز،( ۔ہوتا‘‘ ندوی میاں علی الحسن ابو سید مولانا العلماء ندوة ناظم مصنف کے کتب و مضامین تاریخی و ادبی، علمی متعدد ء)١٩٩٩-١٩١۴( ء١٩٣۴ ۔ ہوئے وابستہ علم طالب بطور سے العلماء ندوة میں ء١٩٢٩ تھے۔ تدریسی، حدیث و تفسیر اور ادب عربی استاد بحیثیت میں ادارے اسی میں سنبھالتے سنبھالتے داریاں ذمہ کی عہدوں ترین اہم اور کیا آغاز کا زندگی جنوری یکم مولانا، ، الدین وحید( رہے تاحیات اور ہوئے مقرر ناظم ان پر حکم کے ء)١٩۴٣ -١٨۶٣( تھانوی علی اشرف مولانا وه ۔ء)٢٠١٧ ء)١٩٣۶ -١٨٣۵( پوری دین محمد غلام خلیفہ حضرت مرشد و شیخ کے کے عہد اس پوری دین محمد غلام خلیفہ ئے۔آ پور بہاول لیے کے بیعت سے پور خان اور تھا سے سلسلہ قادری تعلق کا ان تھے۔ سے میں کبار مشائخ الحسن ابو( تھے مقیم میں پور دین قصبہ واقع پر فاصلہ کے میل چند سے تھا، پور بہاول سفر پہلا یہ کا ندوی علی الحسن ابو ۔)١٢٧ ص ندوی، تھا۔ مشتمل پر قیام دن چار تین اور پایا انجام میں ء١٩٣٢ یا ء١٩٣١ جوجون

ہیں: دہراتے کو یادوں ان کی پور بہاول میں کہ تھی تاریخ کوئی کی جون کے ء١٩٣٢ یا ء١٩٣١ ’’ لوگ ہم کو مغرب ہوا… روانہ لیے کے پور خان سے میل کراچی غالباً ہوئے۔ روانہ طرف کی پور دین سے پہنچے۔وہاں پور خان اس غالباً چہره منور گئی۔ایسا ہو زیارت کی مولانا ہی کو رات سخن کم اور گو کم آیا۔نہایت نہیں میں دیکھنے پہلے سے

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.