نج ث ٹ � اوررات�اتجس� �ا���ا ات����اس

Maarif - - News -

ڈاکٹر اسلم عبداللہ میں قیادت کی ٹرمپ ڈونالڈ صدر کہ ہو نہ غلط شاید کہنا یہ

کی پرستی نسل فام سفید بلکہ نہیں ہی پسندی جنون مذہبی امریکہ، جنون مذہبی یہ کہ ے� درست بھی کہنا یہ اور ے� ا �ر بڑھ سے تیزی طرف سیاست عالمی بلکہ سیاست امریکی صرف نہ پرستی نسل فام سفید اور بنیاد عیسائی میں قیادت دور کے ٹرمپ صدر ے۔� ہورہی انداز اثر بھی پر میں شعبہ ر� کے معاشرت اور معیشت سیاست، امریکی اثرات کے پرستی

)۱( ہیں۔ آتے نظر پر طور واضح اگر کہ ے� کردیا شروع کہنا یہ نے تنظیموں پرست بنیاد عیسائی کردیں ناراض کو اللہ وہ تو کی مخالفت کی ٹرمپ صدر نے عیسائیوں کے عتاب کے اللہ پر نسلوں والی آنے بلکہ اوپر اپنے صرف نہ اور گے میں گھروں گرجا کے عیسائیوں پرست بنیاد ان گے۔ بنیں سبب کا نزول جاتی مانگی دعائیں ہی ہفتہ ر� تقریباً ے�ل کے سلامتی کی ٹرمپ صدر بچایا نہ کو ٹرمپ صدر اگر کہ ے� جاتا کرایا باور کو معتقدین اور ہیں

گا۔ ہوجائے خاتمہ کا عیسائیت تو گیا زائد سے فیصد ۸۰ تقریباً میں انتخابات صدارتی کے ء۲۰۱۶ اظہار کا رائے انتخابی اپنی میں حق کے ٹرمپ نے پرستوں بنیاد عیسائی

ے۔� کیا نے اللہ خود انتخاب کا ٹرمپ نزدیک کے ان تھا۔ کیا سمجھنا کا اسباب ان ے�ل کے سمجھنے کو حال صورت اس

ہیں۔ دار ذمہ کے اس جو ے� ضروری بلکہ دی، طلاق صرف نہ کو بیویوں دو اپنی نے ٹرمپ صدر

بلکہ نہیں یہی ہیں۔ عام بھی داستانیں کی روی راہ ے� جنسی کی ان خواتین وہ کہ ے� کردیا ثابت بھی یہ نے انہوں سے عمل و قول اپنے

امریکی نے انہوں کہ یہ طرہ پر اس ہیں۔ دیکھتے سے نظروں ہوئی گری کو کیں۔ نہیں فراہم تفصیلات کی ٹیکس اپنے بھی کبھی سامنے کے عوام اور جونیئر فالویل جیری رہنما کے پرستوں بنیاد باوجود کے اس

اور ہیں سمجھتے ضروری ے�ل کے بقا کے عیسائیت کو ان گراہم فرینکلن ثقافتی حواری، کے ان اور وہ ہی سے مدد کی ٹرمپ صدر کہ ہیں کہتے

ہیں۔ کرسکتے حاصل کامیابی میں جنگ مذہبی اور ے� میں جنگ حالت عیسائیت میں نظر کی قائدین عیسائی ان

ان ہیں۔ سکتے دلا کامیابی کو ان ہی ٹرمپ صدر میں جنگ اس اور نہیں مطلب کوئی سے کردار ذاتی کے ٹرمپ صدر انہیں کہ ے� کہنا کا نے اللہ کہ ے� درج میں عتیق عہدنامہ یا بائبل نزدیک کے ان کیونکہ یہ کا ان تھا۔ چنا ے�ل کے نجات کی یہودیوں کو روا فرماں کافر ایک نے اللہ بھی پھر لیکن کیا‘‘ زنا نے داؤد باللہ نعوذ کہ ے� کہنا بھی

)۲( کی۔ عطا بادشاہت کی اسرائیل انہیں عیسائیت ے� ا�کرر استعمال کو ٹرمپ صدر اللہ نزدیک کے ان

ے� ہوسکتا ممکن وقت اسی فروغ کا عیسائیت اور ے�ل کے فروغ کے کا ججوں ایسے اور ے�ر پیش پیش میں تحفظ کے اسرائیل امریکہ جب )۳( کریں۔ پر بنیاد کی عیسائیت فیصلے کے کورٹ سپریم جو کرے تعین کہ ہیں کہتے قائد عیسائی یہ ہوئے بناتے بنیاد اپنی کو بائبل نقصان انہیں اور دو نہ اذیت کو قائدین چنیدہ میرے کہ ے� لکھا میں زبور

)۱۰۵ : ۱۵ بائبل( پہنچاؤ۔ نہ کورٹ سپریم اور اسرائیل پارٹی ریپبلکن کی ان اور ٹرمپ صدر ساتھ کے پرستوں بنیاد عیسائی میں مسئلہ کے نامزدگی کی ججوں کے کا کرنے تسلیم راجدھانی کی اسرائیل کو یروشلم نے امریکہ چنانچہ ے۔� نظریاتی میں کورٹ سپریم اور لیا پر ایما کی پرستوں بنیاد عیسائی فیصلہ کوشش کی کرنے متعین جج ترجمان کے پرستوں بنیاد عیسائی سے طور

)۴( ے۔� کڑی ایک کی سلسلے اسی بھی کا امریکہ ہمیں ے�ل کے سمجھنے کو حال صورت سیاسی اس حاصل آگہی سے مقاصد کے پرستوں بنیاد اور ہوگا سمجھنا نقشہ مذہبی

ہوگی۔ کرنا ے�ر موجود سے ہی شروع فرقے مختلف کے عیسائیت میں امریکہ

لیکن تھا نہیں وجود کا عیسائیت میں امریکہ قبل سے نظام نوآبادیاتی ہیں۔ ہوئے جڑے سے مذہبیت اور روحانیت سے انداز اپنے اپنے باشندے مقامی

اور اینگلکن کیتھولک، پروٹسٹنٹ، میں امریکہ بعد کے نظام نوآبادیاتی تھے۔ تنظیمیں اپنی اپنی نے فرقوں ان کیا۔ شروع ہونا آباد نے عیسائیوں آرتھوڈاکس اور کی۔ کوشش کی ڈھالنے میں انداز نئے کو عقائد اپنے اپنے اور کیں قائم

دیا۔ فروغ کو فرقوں نئے نئے نے فکر انداز نئے اس پھیلتے بھی اثرات کے مذاہب دیگر میں امریکہ بعد کے ء۱۹۸۵ یہودیت اور اسلام اور مذہب ہندو مذہب، بودھ میں ان ہیں۔ آتے نظر ہوئے

تھے۔ نمایاں خاصے کی عیسائیوں میں امریکہ مطابق کے شمار و اعداد کے ء۲۰۱۶ فیصد ۲۳ ہیں۔ پروٹسٹنٹ فیصد ۴۸ . ۹ میں ان ے،� فیصد ۷۳.۷ تعداد کسی کو آپ اپنے فیصد ۱۸.۲ ہیں۔ مورمن فیصد ۱.۸ اور ہیں کیتھولک مسلمان جبکہ ے� فیصد ۲.۱ آبادی یہودی کرتے۔ نہیں وابستہ سے مذہب بڑی کی والوں رکھنے عقیدت سے پرستی بنیاد عیسائی ہیں۔ فیصد . ۸

ے۔� میں ریاستوں جنوبی کی امریکہ تعداد ایونجلسٹ یا پرست بنیاد عیسائی اکثریت کی مندوں عقیدت ان رکھتے تعلق سے فرقے پروٹسٹنٹ تر زیادہ ایونجلسٹ یہ ے� مبنی پر عیسائیوں یقین جب ے� ممکن وقت اسی نجات کہ ے� یہ عقیدہ بنیادی کا ان ہیں۔ پر صلیب نے عیسیٰ حضرت کفارہ کا گناہوں کے انسانیت کہ جائے کیا دین تجدید پر بنیاد کی اصول اس کہ ے� عقیدہ کا ان کیا۔ ادا کر چڑھ فروغ کے عیسائیت اور ے� ضروری ماننا کتاب حتمی کو بائبل ے۔� ضروری

ے۔� ضروری کردینا قربان چیز ر� ے�ل کے مختلف جب ہوا سے ء۱۷۳۸ آغاز کا تحریک اس میں عیسائیت

کرنے منظم کو گھروں گرجا پر بنیاد کی عقائد بالا درج نے مبلغین عیسائی قابل نام ذیل درج میں قائدین کے تحریک اس کیا۔ آغاز کا کوشش کی ہیرالڈ رائٹ، بل گراہم، بلی نیلٹ، ائٹ�و جارج ویزلی، جان ہیں، ذکر

جونز۔ لائیڈ مارٹن اور سٹاٹ جان اوکینگا، جان جاتے پائے ہی میں امریکہ ایونجلسٹ زیادہ سے سب میں دنیا

میں امریکہ اور ے� زائد سے فیصد ۲۵ تعداد کی ان میں امریکہ ہیں۔ میں دنیا سے تیزی بڑی گروہ عیسائی یہ ے۔� گروہ مذہبی بڑا سے سب یہ

ے۔� ا�ر بڑھا اثرات اپنے شروع پھیلانے اثرات اپنے نے گروہ اس میں صدی اٹھارہویں

اس میں ملکوں نوآبادی اثر زیر کے اس اور برطانیہ میں ابتدا اور ے�ک کے تحریک اس میں ملک ر� تقریباً کے دنیا آج کیا۔ شروع پھیلنا نے

سے جس ے� تنظیم عالمی ایک کی گروہ اس ہیں۔ موجود والے ماننے نام کا تنظیم عالمی اس ہیں۔ ہوئی جڑی تنظیمات زائد سے سو تقریباً کی اس میں ممالک ۱۲۹ کے دنیا اور ایونجلسٹ عالمی برائے الحاق ے� ملین ۶۳۰ تعداد کی والوں ماننے کے اس میں دنیا آج ہیں۔ موجود شاخیں

فیصد۔ ۲۸ کا آبادی عیسائی عالمی یعنی ے� پروٹسٹنٹ فیصد ۱۶ اور کیتھولک فیصد ۲۲ تقریباً میں امریکہ عیسائی میں سیاست قومی کی امریکہ ہیں۔ آتے میں زمرے کے ایونجلسٹ

ے۔� بڑی خاصی تعداد کی متبشرین ہیں، ۳۰ یہودی ہیں، عیسائی ۴۸۵ میں ایوانوں دونوں کے امریکہ سازوں قانون عیسائی ہیں۔ ۱۲ دیگر اور دو مسلمان تین، ہندو اور بودھ ہیں۔ آرتھوڈاکس پانچ اور مورمن ۱۳۷ کیتھولک، ۱۶۸ پروٹسٹنٹ، ۲۹۹ میں ڈیموکریٹک جبکہ ہیں، عیسائی ۲۹۱ میں ممبران ۲۹۳ کے پارٹی ریپبلکن ہیں۔ بھی مسلمان دو اور بودھ تین ہندو، تین یہودی، ۲۸ میں پارٹی عقیدہ ایونجلسٹ عیسائی اکثریت کی ممبران کے پارٹی ریپبلکن

ے۔� رکھتی تعلق سے بڑے سے سب کے اسرائیل میں امریکہ ایونجلسٹ عیسائی

راج کی اسرائیل کو یروشلم نے ٹرمپ صدر پر ایما کی انہی ہیں۔ حامی کے ان کیا۔ تعین کا جج متنازعہ کے کورٹ سپریم اور کیا تسلیم دھانی کو ان ہیں۔ کرتے ملاقات سے ٹرمپ صدر میں اؤس� ائٹ�و ہفتہ ر� قائد کرتے خیال تبادلۂ پر مسائل عالمی اور قومی سے ان اور ہیں دیتے دعائیں ہیں روابط گہرے کے ان سے ملازمین موجود میں اؤس� ائٹ�و ہیں۔

بڑھتی۔ نہیں آگے پالیسی کوئی بغیر کے مشورے کے ان اور ہیں: ذیل درج عقائد بنیادی کے عیسائیوں ایونجلسٹ ان

میں امور انسانی عالمی اور ے� کررہی تباہ کو آپ اپنے انسانیت ری�جو نہیں۔ ممکن بقا کی انسانیت بغیر کے مداخلت کی عیسی حضرت صرف اور ے� ا�جار لے طرف کی تباہی کو انسانیت فروغ کا ہتھیاروں ے۔� سکتا رکھ محفوظ کو دنیا سے تباہی اس ہی امریکہ عیسائی ایک جب ے� ہوسکتی ممکن وقت اسی مداخلت کی عیسیٰ حضرت

ہو۔ راجدھانی کی اس یروشلم اور ہو محفوظ اسرائیل ملک کا یہودیوں سے دشمنوں یروشلم قبل سے آمد کی عیسی حضرت نزدیک کے ایونجلسٹ کہ ے� عقیدہ کا ان ہوگی۔ آرہی نظر سامنے تباہی کی اس اور گا جائے گھر ریاست اسرائیلی ایک بالآخر ا۔�ر میں اتھوں� ناپاک تک سال سو چار یروشلم

وجود میں آئی اور حضرت عیسی کی واپسی ممکن ہوئی۔ یہ رہنما عہدنامہ عتیق کی درج ذیل کتاب کے حوالہ سے کہتے

ہیں کہ جو کوئی یروشلم کے خلاف اٹھے گا اسے اللہ تباہ کردے گا۔ بائبل،( )۱۲ : ۹ حضرت عیسیٰ کی واپسی اسی وقت ممکن ہوگی جب شمال اور جنوب میں دو طاقتور حکمراں ہوں گے اور ان حکمرانوں میں شمالی خطہ کا حکمراں کامیاب ہوگا اور امریکہ وہ ملک ے� جو شمالی خطہ کی قیادت کا ل�ا ے� اور صدر ٹرمپ امریکہ کے وارث ہیں۔ حضرت عیسیٰ کی واپسی اسی وقت ممکن ہوگی جب یورپ

ایک مستقل اکائی کی حیثیت سے طاقتور ہوجائے گا اور شمالی خطہ کا حکمراں اس کی طاقت کو کمزور کرے گا۔ حضرت عیسیٰ کی واپسی اسی وقت ممکن ہوگی جب اسرائیل

اور امریکہ دنیا میں معتوب ہوجائیں گے اور اسرائیل طاقتور ہونے کے بعد بکھرنا شروع ہوجائے گا۔ حضرت عیسیٰ کی واپسی کے ے�ل ضروری ے� کہ بائبل پوری

دنیا میں پڑھی جانے لگے اور دنیا کے لوگ اس کو حتمی کتاب مان کر اس پر عمل کرنے لگیں اور یہ اسی وقت ممکن ے� جب امریکی سیاست ایونجلسٹ کے اتھ� میں آجائے۔ حضرت عیسی اسی وقت واپس آئیں گے جب دنیا ایک واحد

مواصلاتی نظام سے جڑ جائے گی۔ عیسائی ایونجلسٹ قائد عہدنامہ عتیق اور جدید کی تحریر کی

بنیاد پر اپنے ان عقائد کو صحیح مانتے ہیں اور دعویٰ کرتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ کا ظہور اب کسی وقت بھی ہوسکتا ے۔� ان کے ظہور کے وقت درج ذیل واقعات رونما ہوں گے: فرشتوں کے سردار میکائیل بگل بجاکر حضرت عیسیٰ کی آمد

کا اعلان کریں گے۔ حضرت عیسیٰ فضا میں تیرتے ہوئے ے�نی اتریں گے۔ انسانوں کی ہیئت تبدیل ہوجائے گی، بیماری، موت اور بھوک

مری ختم ہوجائے گی اور انسان حضرت عیسیٰ کا نظارہ کریں گے۔ عیسائی ایونجلسٹ کا دعویٰ ے� کہ ء۲۰۲۱ سے دنیا کی تباہی

کا سلسلہ شروع ہوجائے گا اور ء۲۰۲۸ میں حضرت عیسیٰ کا ظہور ہوگا۔

ان کی قیادت میں اسرائیل اپنے تمام دشمنوں کو شکست دے دے گا۔ یہودی اس کے بعد عیسائیت قبول کرنے لگیں گے اور وہ اس بات کا اقرار کریں گے کہ حضرت عیسیٰ ہی اصل مسیح ہیں۔ حضرت عیسیٰ کے ظہور سے قبل یہودی اپنا صومعہ تعمیر کریں گے اور اں�و

وہ قربانی کی رسم کی بھی تجدید کریں گے۔ عیسائی قائدین کے مطابق جو یہودی حضرت عیسیٰ کو اپنا مسیح نہیں مانیں گے وہ ختم ے�کرد جائیں گے، بائبل کے مطابق دو تہائی سے زائد یہودی تہہ تیغ ے�کرد جائیں گے۔ ء۱۹۹۴ میں ایک عیسائی مبلغ بیل لنڈ سے نے ایک کتاب لکھی تھی جس کا عنوان تھا ’’کرۂ ارض ۲۰۰۰‘‘۔ بائبل کی کتاب زکریا :۱۲( )۱۴ کا حوالہ دیتے ہوئے وہ لکھتے ہیں کہ ’’ظہور عیسی کے وقت یہودی بدترین کیفیت سے گزریں گے، ان کے جسم سے گوشت گرنا شروع ہوجائے گا۔ ان کی پتلیاں آنکھوں سے ر�با آجائیں گی اور ان کی زبان ان کے منہ سے ابل پڑے گی۔ ان کی لاشوں سے خون کا ایک ایسا دریا رواں ہوگا جو پانچ فٹ گہرا ۔ہوگا‘‘ ان عیسائی مبلغین کے مطابق زندہ صرف وہ لوگ رہیں گے جو

حضرت عیسیٰ کے ذریعہ نجات پر یقین رکھتے ہیں۔ پچھلے دو زار� سال سے عیسائی حضرت عیسی کی واپسی کے منتظر ہیں، ان دو زار� سال میں عیسائی مبلغین نے تقریباً۶۵ مرتبہ حضرت عیسی کی واپسی کی تاریخ کا اعلان کیا لیکن ر� مرتبہ انہیں اپنی تاریخ

کو ملتوی کرنا پڑا۔ سب سے پہلے تین عیسائی مذہبی علماء نے ۵۰۰ سال بعد از مسیح حضرت عیسی کی واپسی کی پیشین گوئی کی تھی۔ مستقبل کی پیشین گوئیوں کے مطابق حضرت عیسیٰ ء۲۰۱۹ میں واپس آئیں گے اور ان کی واپسی کا

دن ؍۸ جون ے۔� یہ پیشین گوئی رونالڈ وین لینڈ کی ے۔� جین ڈکس کی پیشین گوئی ے� کہ ان کی آمد ء۲۰۲۰ اور ء۲۰۳۷ کے

دوران ہوگی۔ کینٹن میشور کا کہنا ے� کہ وہ ء۲۰۲۱ اور ء۲۰۲۸ کے دوران آئیں گے۔

کچھ عیسائیوں کا کہنا ے� کہ حضرت عیسی ء۲۰۲۴ میں لوٹیں گے۔ السید بیلی کہتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ ء۲۰۲۵ میں لوٹیں گے۔جیکب لوریر کا کہنا ے� کہ حضرت عیسی ء۲۰۳۰ اور ء۲۰۳۳ کے درمیان لوٹیں گے اور فرینک پٹر کا کہنا ے� کہ ء۲۰۵۷ تک حضرت عیسیٰ کی

مطابق کے رہنماؤں اور مفکرین مبلغین، عیسائی ان ے۔� یقینی واپسی ایسا ایک گا، کرے ادا کردار اہم میں واپسی کی عیسیٰ حضرت امریکہ یروشلم شروعات یہ ے۔� کردی شروع نے ٹرمپ صدر ابتدا کی جس کردار اور ے� ہوتی سے کرنے قبول میں شکل کی راجدھانی کی اسرائیل کو

ہوگی۔ کڑی آخری کی اس خاتمہ کا دشمنوں کے اسرائیل ؍۱۳۴ کو اسرائیل امریکہ تک اب سے ء۱۹۴۹ کہ ے� وجہ یہی

نے امریکہ میں متحدہ اقوام ے۔� چکا دے امداد زائد سے ڈالر ارب

ے۔� کیا استعمال کا ویٹو اپنے میں حق کے اسرائیل مرتبہ ۴۳ اسرائیلی ے�ل کے پیروکاروں اپنے ماہ ر� ایونجلسٹ عیسائی

کے واپسی کی عیسیٰ حضرت انہیں جہاں ہیں کرتے اہتمام کا دورے نہیں یہی ہیں۔ جاتی سنائی تقاریر پر ضرورت کی بقا کے اسرائیل ے�ل اسرائیل اور واپسی کی عیسیٰ حضرت میں گھروں گرجا اکثر کے امریکہ بھی مذاکرات اور کانفرنسیں علاوہ کے خطبات دن کے اتوار پر اہمیت کی

ہیں۔ رہتے ہوتے سہولیات کی انٹرنیٹ اور ویژن ٹیلی ریڈیو، کو مبلغین عیسائی کنٹرول کے ان ویژن ٹیلی زائد سے ۱۰۰ اور ریڈیوں ۲۴۰۰ تقریباً ہیں۔ حاصل ے۔� اکثریت بھاری کی سازوں قانون کے ان میں ریاستوں جنوبی ہیں۔ میں کیا ادا کردار بڑا نے گروہوں ان میں کامیابی کی ٹرمپ صدر امریکہ صرف نہ اثرات کے ان سے تعاون کے انتظامیہ امریکی اب اور ے�

ہیں۔ ے�جار بڑھتے بھی میں ممالک دیگر کے دنیا بلکہ میں ا�جار آتا میں نرغے کے ایونجلسٹ عیسائی آہستہ آہستہ امریکہ

مدد سے خاموشی کی ان میں کام اس انتظامیہ کا ٹرمپ صدر اور ے�

ے۔� ا�کرر قائدین کئی ے،� گیا دیا عہدہ کلیدی کو کئی میں قائدین کے ان

ایسے سے توسط کے پارٹی ریپبلکن اور ے� گئی دی معاونت اقتصادی کو فکر کی پرستوں بنیاد عیسائی جو ے� ا�جار دیا فروغ کو دانوں سیاست

ہیں۔ کرتے عکاسی کی ایسی ایک امریکہ ملک والا رکھنے یقین پر آزادی مذہبی ر�بظا پرستی بنیاد عیسائی اور پرستی نسل فام سفید جہاں ے� نکلا جا پر ڈگر وہ حدتک کس ہیں۔ چاہتے ڈھالنا میں رنگ اپنے کو مستقبل کے اس ان صرف اور صرف جواب کا اس گے، ہوں کامیاب میں عزائم اپنے رکھتے نہیں اتفاق سے فکر کی ان جو گا آئے سے طرف کی عیسائیوں

کہ ہوں رکھتے یقین یہ جو ے� کم ابھی تعداد کی عیسائیوں ایسے لیکن سے خاتمہ کے یہودیوں اور بقا کے اسرائیل واپسی کی عیسیٰ حضرت )۵( ے۔� نہیں منسلک ---------------------------------------------------------------------------- حواشی )۱( نومبر ء۲۰۱۸ میں امریکہ کے عوام نے وسط مدنی انتخابات میں حصہ لیا۔ صدر ٹرمپ کی ریپبلکن پارٹی کے کئی امیدوار ایسے تھے جو نہ صرف سفید فام نسل پرستی کے نقیب ہیں بلکہ عیسائیت کے فروغ کے ے�ل انتہاپسند اقدامات اٹھانے کے بھی حامی ہیں۔ امریکی ریاست واشنگٹن کی اسمبلی کے ایک رکن ایسے ہی خیالات کے حامی ہیں، ان کا تعلق ریپبلکن پارٹی سے ے� اور انہوں نے اپنے دینی اسکول کے ے�ل بائیل کے کچھ قوانین پر مشتمل سبق تیار ے�ک ہیں۔ انہوں نے لکھا کہ بائبل کے قوانین ملک میں نافذ ہونے چاہییں اور اگر کوئی ان سے انکار کرے تو اگر وہ مرد ے� تو اس کا قتل واجب ے� ان قانون ساز کا نام ے� نیٹ شے۔ اسی طرح امریکہ کی نارتھ کیرو لائنا ریاست کی اسمبلی کے رکن ہیں۔ ان کا تعلق بھی صدر ٹرمپ کی پارٹی سے ے� انہوں نے حال ہی میں الیکشن کے دوران بیان دیا کہ دنیا میں امن اسی صورت سے قائم ہوسکتا ے� جب مسلمان اور یہودی عیسائی مٹ جائیں۔ امریکی کانگریس کے سابق اسپیکر نیوٹ گنگرچ نے بھی انتخابات سے قبل بیان دیا کہ جو امریکی مسلمان شریعت سے وفاداری کا اظہار کرے اسے ملک سے نکال دیا جائے۔ )۲( عہد نامہ عتیق اولڈ( ٹیسٹامنٹ) کی کتاب سیموئیل میں اس واقعہ کو درج کیا گیا ے� کہ حضرت داؤد کی فوج میں ایک سپاہی تھا جس کا نام یریا تھا، اس کی بیوی کا نام بیتھ شیبا تھا۔ حضرت داؤد نے اس سپاہی کو جنگی مہم پر بھیجا تاکہ وہ اس کی بیوی سے تعلقات قائم کرسکیں نعوذ( باللہ) ۔ سیموئیل،( کتاب دوئم) )۳( چنانچہ امریکی صدر نے نومبر میں ایک عارضی اٹارنی جنرل کا تعین کیا جن کا نام ے� وہٹپکر۔ ان کا کہنا ے� کہ جج اگر بائبل کے مطابق فیصلے نہ کریں تو انہیں برخواست کردینا ے۔�چاہ )۴( پریٹرگرام عیسائی بنیاد پرستوں کی طرف سے دعاؤں کی ترویج کا ایک برقی ذریعہ ے،� ر� روز کروڑوں عیسائیوں کو دعائیں نذر کی جاتی ہیں، ایک دعا یہ

بھی ہوتی ے:� ’’اگر ہم اسرائیل کا ساتھ دیں خواہ وہ غلطی پر ہی کیوں نہ ہو تو اللہ ہمارا ساتھ

دے گا، ہمارا صدر اسرائیل کے ساتھ ے� تو اللہ بھی ہمارے ساتھ ۔ے‘‘� )۵( جس طرح عیسائیوں کی اکثریت اس بات پر یقین رکھتی ے� کہ بائبل میں کوئی تحریف نہیں ہوئی اور اس کا ایک ایک لفظ سچا ے� تو اسی طرح ایک عام ایونجلسٹ یہ یقین رکھتا ے� کہ بائبل میں درج شدہ ر� پیشین گوئی سچ ثابت

ہوگی۔ ایونجلسٹ کا کہنا ے� کہ سفید فام نسل اعلی نسل ے� اور عیسائیت کا فروغ اسی نسل کے ذریعہ ہوا ے� اور آیندہ بھی ہونا ے� اور اس کے ے�ل اللہ نے ٹرمپ اور ان کے ہم نواؤں کو چن لیا ے� جو ریپبلکن پارٹی کی قیادت ے�کرر ہیں۔ یہ ایونجلسٹ ر� اس پارٹی کے کارکن کے خلاف ہیں جو اسرائیل کا حامی نہ ہو

اور بائبل پر مشتمل نظام کا علم بردار نہ ہو۔

ُ

ایونجلسٹ کی ایما پر ریپبلکن پارٹی کی قیادت آئے دن اسلام کے خلاف ر�ز گلتیا رہتی ے� اور مسلمانوں کو اذیت دیتی رہتی ے،� یہ قیادت کہتی ے� کہ اسلام کوئی دین نہیں ے� بلکہ شخصیت پرستی پر مبنی ایک تحریک ے� جو تشدد اور خوں ریزی کے ذریعہ امریکہ اور مغربی تہذیب کو تباہ کرنے کے ے�در ے۔� چنانچہ آئے دن ایونجلسٹ کی جانب سے ایسے بیانات شائع ہوتے رہتے ہیں جو اسلام کو

ایک معتوب دین کی حیثیت سے پیش کرتے ہیں۔ ایونجلسٹ کی بڑی تعداد ان عیسائیوں پر مشتمل ے� جو ائی� اسکول سے زائد تعلیم یافتہ نہیں ہیں جو دیہی علاقوں میں رہتے ہیں اور جن کا ربط کبھی کسی

غیر عیسائی سے نہیں ہوا۔ ایونجلسٹ ان افراد کی مدد سے اپنے خیالات کو فروغ دیتے ہیں۔ کیونکہ امریکہ کا انتخابی نظام اس طرح سے قائم کیا گیا ے� جہاں ایسے لوگوں کی نمایندگی امریکی سینٹ میں آسانی سے ہوتی ے،� اس ے�ل سیاسی طور پر ان کا غلبہ رہتا ے۔� امریکی سینٹ سو ممبران پر مشتمل ے� اس سینٹ میں ۲۰ ممبران ان ریاستوں سے آتے ہیں جہاں ملک کے پچاس فیصد لوگ رہتے ہیں اور جہاں ملی جلی اور مخلوط آبادی ے۔� جبکہ ۸۰ ممبران ان ریاستوں سے آتے ہیں جہاں ایونجلسٹ کی خاصی تعداد رہتی ے� جو سفید فام نسل پرستی پر یقین رکھتی ے� اور اسی ایونجلسٹ طاقت کی بنیاد پر صدر ٹرمپ ر� وہ کام ے�کرر ہیں جو ان کے ایجنڈے

کو فروغ دے ا�ر ے۔�

Newspapers in Urdu

Newspapers from India

© PressReader. All rights reserved.